Categories
Social

Leaked Videos Tissue Full Uncut Watch Here

مطیع اللہ جان اتنا با کردار اور ایماندار صحافی اور بہت ہی اچھا انسان ہے جس نے ساری زندگی اپنے بچوں کو رزقِ حلال کما کر کھلایا جو اُن سب کے لیے باعث فخر ہے
لیکن مطیع پرجھوٹ، بہتان لگانے والے کبھی رزقِ حلال کمانے کا دعوی نہیں کر پائیں گے، اُن کا خمیر کہاں سے اُٹھاسب نے خود دیکھ لیا

مطیع اللہ جان سے میرا تعلق بہت پرانا ہے۔
ہم فرنٹیر پوسٹ میں ساتھ ہوتے تھے۔
انکی رزق حلال کمانے کی عادت اتنی پختہ ہے کہ کوئی نہ انہیں خرید سکتا ہے اور نہ ہی ڈرا سکتا ہے، اور میں بے بس کچھ معاملات اللہ پر چھوڑنے کا قائل ہوں۔
انکے لئے ڈھیروں دعائیں۔
مطیع سلامت رہو۔
اللہ بہت بڑا ہے۔

میں مطیع اللہ جان جو 1993/94 سے قریب سے جانتا ہوں، با کمال صحافی ہے، آپ اس کی کسی بات سے اختلاف کر سکتے ہیں لیکن الزام نہیں لگا سکتے

مطیع اللہ جان اتنا با کردار اور ایماندار صحافی اور بہت ہی اچھا انسان ہے جس نے ساری زندگی اپنے بچوں کو رزقِ حلال کما کر کھلایا جو اُن سب کے لیے باعث فخر ہے

سارا سارا دن دوسروں کے کردار پہ کیچڑ اچھالتے ہیں اور بات کردار کی کرتے ہیں، جعلی ویڈیوز بنا بنا کے دن رات گزارتے ہیں اور بات کردار کی کرتے ہیں۔ اللہ پاک پوچھے گا، رسی دراز وہ کر دیتا ہے تا کہ دیکھے کوئی کس حد تک جا سکتا ہے

یہاں کوٸ صحافی نیوٹرل یا غیر جانبدار نہیں ہے سب کا کسی نہ کسی سیاسی پارٹی کے ساتھ تعلق ضرور ہے جو صرف اسی مخصوص پارٹی کو سپورٹ کرنے کے علاوہ باقی سب کے خلاف بیان بازیاں کرتے ہیں
شاید ہی ایک آدھ نیوٹرل ہوں جیسے کاشف عباسی وغیرہ باقی تو آزاد صحافت کا نام ہی مت لیں یہاں

جب صحافی سارے حکمرانوں کی خدمت گزاری میں لگ جاتے ہیں اور ہر کوئی اپنی دل کی تمناؤں کو ہر وقت سیاست دان کے لیے استعمال کرتے ہیں تو پھر یہی سب ہوتا ہے.

اللہ آپ کی آل اولاد کو مطیعاللہ جان جیسے کردار و اعمال والا بنائں

آمین یا رب العالمین

Categories
Social

Pet Market Mafia in Pakistan

Rawalpindi pet market mafia has reached the levels below hell. They are dumping sick dogs & cats in drains – the ones they didn’t feed at all & let them get weak. Instead of calling a vet – they dumped them in drains. Same is the case in Karachi, Lahore, and other places in Pakistan. This is insane and getting out of hands.

There is no mercy in the heart of these shopkeepers. They don’t pay proper taxes as they don’t maintain books on animals they have sold & made profit on. Authorities must punish them and make them pay for the treatment of these animals. Unfortunately, this is their normal routine. Small animal rescue teams/activists have been trying to shed light on this but the media has not been paying attention so far… We have tried to work with so many government officials to either close the pet Markets or regulate them. I know that these are strong people but state is stronger than them and this is a matter of urgency.

That’s horrible & heartbreaking. Almost every pet market in Pakistan resorts to same barbarian practices. Unfortunately, no action will be taken. The fact that these “markets” are able to do this daily without any repercussions means the govt departments are supporting them in exchange for money. Do you know if there is any organization there for this purpose for the rescue? Any charity that would help support these animals? If you know anyone working for the safety and food for these animals, please let me know it or ask them to rescue these animals. I will support them.

This is cruel, every cat and dog should be looked after like your own child. I do feel sorry for them animals who are been dumped when they are ill. Why not just take them to a vet and when they are well give them to a good home to get looked after. Are they rescued? Safe now? There should be a stray home shelter in Islamabad, Karachi, Lahore and every city of Pakistan. 1 puppy expired after an hour of arrival at the clinic. Rest of the three are doing slightly better after treatment and IV infusions over night, however one of them is having profuse diarrheic, dehydration and sub normal temperature.

We are doing our best to help them out of the trauma, neglect and abuse. Please whole heartedly donate towards their treatment.

Categories
Politics

Real Story of Golden Man of Islamabad

Few years ago I was in Kuala lumpur for a conference and went out in the evening on Buket Bintang for a stroll. Amidst other attractions, one thing which really fascinated me was frozen live human performers in golden and silver which made the whole street very interesting. Remember the Islamabad was still a sleep city. That is why the real story of Golden man of Islamabad is so interesting.

Hailing from a poor background he started a menial labour job in Islamabad but then couldn’t make his ends meet. Like many others he used to watch YouTube videos in his spare time on his phone. He noticed a similar golden man in some Western city and thought of becoming one as people also donate money to  them. He started doing that in various markets and roads of Islamabad and became an integral part of Islamabad identity. That really became something for him personally too.

Other day one of my friends met him somewhere in Islamabad and appreciated his work. But I don’t know what’s gone wrong with our people, they can’t see a person earning his living and happiness. Pakistan is hell is for all talented people. No one gets valued here. Whether its the Golden Man or legendary Abdus Salam. No respect for talent and halal ki kamayi. People would fear/respect you when you’re more powerful. I mean what’s really wrong with us after all.

Why they don’t let others live in peace. He is working having halal money making people and children happy like wth man, this world is so cruel. Very very painful to see him disappointed. He faced harsh weather conditions and extreme criticism from people but still went on, but today state itself has abandoned him. Similar artists seen standing near sea view and Saba ave over weekends. These guys are really good and should be promoted. Someone pls get them some spotlight.

I went to this area two days back and Google actually said “straight ahead from the golden man” I swear I didn’t know it was referring to this guy! Thats kind of big. Shame on whoever maligned him like that. Its actually sad what happened to him as these these mimes are unique all over the world. Someone should support him and give him a secure and nice place where educated people can appreciate him.

That’s so sad what is wrong with people the whole nation need anti depressants. Breaks my heart how this country treats creatives/artists. This is exactly!! Why we are not moving forward. We are morally so low as a society. This incident is heart breaking. We are failing as a society. Our moral values are in decay! Humanity tu naam ko nahi hai. Everyone is just busy being busy nothing constructive is happening. It’s just so shameful & really sad! This guy is working & to treat him like that shows how low we are as humans.

“We are failing as a society”, no madam, this is what our society has been. We are refusing to improve. What this guy is saying is heartbreaking but not a surprise at all. The people of Pakistan literally cannot stand seeing someone happy in their identity. Islamabadis are strange too a friend was walking from F11 towards F10/2 and some ghashti ke bache shot him with paint ball gun while passing in car, his back and chest had bruises and red marks.

 

Categories
Social

Who is Dua Zehra and What Happened to Her

This is the level of bigotry that has seeped into common Pakistanis. A child is missing for a week and the local masjid refused announcement because that child has a Shia name. If this is how terrible things are for a minority sect of Muslims, imagine how it must be for others.

Prayers for Dua Zehra and family. May she and all missing children get back to their parents safely. I urge authorities to protect and safeguard our children. They are our future, there is nothing more important. Dua Zehra went missing from Karachi on 16th of April and is still not recovered. My heart aches for this little girl and her family. May Allah keep her away from any harm and from all the savages. I urge authorities to protect our children and recover her as soon as possible.

5th Day today since Dua Zehra’s disappearance. A girl steps down from her apartment on the 1st floor to dispose off 3 trash bags on the ground floor. She carries 2 bags in her hands towards the ground floor while the third is left in the apartment but she never returns for it. I urge DG ISI, Prime Minister of Pakistan, Federal Interior Minister, Chief Minister Sindh & IG Sindh to personally take note of the missing girl Ms Dua Zehra from Karachi. She is missing for last five days. Civil society to be vigilant also. This is an humanitarian matter.

14 years old Dua Zehra has gone missing from Alfalah area of Karachi’s Shah Faisal Colony. Dua’s father says he still has to here anything about her and the reports of receiving a ransom call are all untrue. May Allah protect her and return her to her family safely aameeen. 14 years old Dua Zehra had gone missing since 16 April, her father has already filed a complaint also appealed to Chief justice of Pakistan and questioned that you open courts at midnight my daughter is also a Pakistani why don’t you open courts now?

I’d say I can’t believe this but I truly can. This is how unsafe it is for women and girls – I hope the girl who has been discovered is unharmed and Dua Zehra will be found safe and sound too. In today’s Shan e Ramzan, Dua’s parents told Wasim Badami that the masjid refused to call out for help because of her Shia name. MashaaAllah, the so-called Muslims of our country should get a Nobel prize. Dua Zehra is missing since 16th of April , no Rule of law, no police action, Law in order situation in Karachi. May Allah protect her and she come back safely to her parents Ameen. This is truly heart breaking.

Categories
Social

Dating and Love in DHA Phase 8 Karachi

This is a view of Karachi’s Defence and Clifton from the night sky (facing northwest). That dark gap in the middle of the other well-lit area is most of DHA Phase 8.

It’s been nearly 30 years and nobody has built anything in an area where 500-sq-yard plots sell for US$700K+. Yes, by high school and college kids drag racing. It’s also the place where, to use the 1950s American metaphor, young couples drive over to “hold hands”. In DHA Peshawar which is yet to be developed, a friend bought a file for a 5 marla plot in 2020 for 33.5 lak and sold it back in for 60 lak in the end of 2021. I don’t think those 5 marla zones will be developed any time soon. It was a no-construction zone for the longest time. I believe some chunk of it still holds thay status.

The rich in Pakistan trust only one asset class: urban real estate. And Karachi is large enough to have this massive borough serve as a physical bank for them to park their cash, no questions asked. There is no construction because of lack of infrastructure. In the last two years roads have been developed so houses are starting to build. As soon as street lights and other things are active it will get populated like rest of dha phase 8.

Whenever I visit Karachi, my family takes me there for dinner and I always wondered why. Any insights? You just reminded me Perveen Rahman case, she had every proof against DHA 8, but unfortunately she was killed by proxies. My father tells me of a time in the mid 80’s when you could buy files for phase 8 at 2 lac per 2,000 sq yrds… rumour was the land would be underwater in 5 yrs. Its just a capital gains ladder.

And mostly because there is no utility or gas connections in this area 30+ years after it was developed because DHA works hand in glove with the real estate mafia. Open plots are safe parking lot for black money. It is a blessing that no construction is done in this part. Already the inhabitants of this phase facing numerous problems which they can only feel and go through. And it is so-called posh locality. DHA should resolve the problems first. Primary being water supply & road network.

Except crescent bay and do Darya restaurants and also Shahid Afridi’s huge house. Energy Wastage, Light Pollution , Worst Lighting Design , No Policy ! Poor for health and environment. Phase 8 is popular for young couples where they can spend time without being bothered by anyone. Defence Phase 8 files are traded like NFTs. Never meant for land utilisation but simply value speculation.

Categories
Social

سانحہ مری کے بعد مری والوں پر تنقید

جب میں نے ٹی وی پر یہ سنا تو مجھے بہت حیرت ہوئی کہ مری کے ہوٹلوں نے گاڑیوں کی بڑی تعداد دیکھ کر فوری طور پر اپنے ہوٹلوں کا کرایہ فی رات اپنے اصل کرایہ کے 100 فیصد سے زیادہ بڑھا دیا ہے۔

ایک سیاح خاتون کے مطابق 25 ہزار میں کمرہ ملا، بچی کی طبیعت بگڑنے لگی تو ہوٹل انتظامیہ کی جانب سے ایک کپ گرم پانی تک نہ دیا گیا

میرا قریب 1992 سے آزادانہ مری آنا جانا ہے زندگی کے دو مسلسل سال میں نے مری میں گزارے ہوے۔ اسی حوالے سے مری کے مقامیوں سے ملنا جلنا بھی ہے۔ مری والے مجموعی طور پر بدطنیت، بدفطرت، احسان فراموش، گھٹیا اور لالچی لوگ ہیں۔ سانحہ مری کے معاملے میں یہ جتنی مرضی صفائیاں پیش کریں

وہ ناقابل اعتبار ہیں۔
ان کے گھٹیا پن کا لیول یہ ہے کہ گھر کے صحن میں سے بہتے چشمے سے کسی ہمساے کو پانی بھرنے کی اجازت نہیں دیتے۔ حالانکہ اس چشمےپہ انکاایک پیسہ بھی خرچ نہیں ہوتاباقی باتیں تو کہیں بعدمیں آتی ہیں۔ مری کےلوکل لوگوں نےبہت سےبیواوں یتیموں کےہوٹلوں پر قبضے کر رکھے

ایک ہی جگہ کو بیسیوں لوگوں کو فروخت کرنے کے بعد اس پر پھر سے قبضہ کر لیتے۔ اگر کوئی وہاں پرتعمیرکی کوشش کرے تو ہر ممکن طریقےسےاس کی راہ میں روڑےاٹکاتے۔غرض کہ اپنی بوٹی کے لیے یہ دوسرےکی بکری ذبح کرنے سے بھی نہیں چوکتے۔حکومت بنیادی اورمری والےمجموعی طور پراس سانحہ کےذمہ دارہیں

گاڑی کو دھکا لگانے کے 10 ہزار مانگنے والوں کی پتہ نہیں کیا مجبوریاں ہوں گی 50000 ایک رات ہوٹل کا کرایہ کرنے والے کیسے ولی اللہ ہوں گے جب ایسی چیزیں دیکھنے کو ملیں تو گالی تو حق بنتا ہے عباسی لوگ ڈیفنڈ کرنے کی بجائے حقیقت دیکھیں اور لوگوں کو دل کی بھڑاس نکالنے دیں

ذاتی تجربہ ہے کہ پاکستان کے تمام سیاحتی مراکز کے لوگوں میں سے مری کے لوگ بدترین اور پرلے درجے کے بدتمیز انسانیت سے عاری لوگ ہیں۔

جس جس کے نام کے آگے عباسی لکھا ھے وہ ہمیں بتا رہا ھے مری کے لوگ انسان نہیں فرشتے ہیں

میں نے پنڈی میں ایک گھر کااوپر والا پورشن رینٹ پر لیا ہوا تھا، ہم 3 لوگ تھے، میں سال بعدQAU ہوسٹل شفٹ ہو گیا،ایک دن کسی کام سے پنڈی آیا تو رات بہت ہو گئی، میرے سابقہ روم میٹ جو سرگودھا کا تھا اسی پورشن میں بلا لیا، میں چلا گیا، مالک مکان کو پتا چلا تو اس نے اسی وقت مجھے

ہاں سے نکال دیا، سخت سردی میں میں اپنے قائد اعظم یونیورسٹی کے ہوسٹل گیا. یہ پوری بیلٹ ہی زلیل اور کمینے لوگوں سے بھری ہوئی ہے،وہ دن اور آج کا دن، میں کبھی کس پہاڑییے سے دوستی یا خیر کی امید نہیں رکھی
یہ لوگ نہت بے مروت، بے حس ہوتے ہیں، مہمان نوازی تو چھو کے بی نہیں گزری ان سے

میرا ایک دوست ہے مری سے، بچپن وہاں گزرا اور اب کوئی ۳۰ سال سے لاہور آباد ہوچُکا ہے۔ اس کی مری والوں کے بارہ میں بلکل یہی رائے ہے

ہم پوٹھوہاری لوگوں بھی دوست وغیرہ پہاڑی کہتے ہیں
دوست کہتے ہیں کہ پہاڑی لوگ تھوڑے سخت مزاج ہوتے ہیں

جہاں تک میں نے 15 سالہ تعلق کے بعد نتیجہ نکالا ہے مری والوں میں جو چیز بلکل بھی نہیں ہے وہ ہے “احساس”۔
جو چیز بہت زیادہ ہے وہ ہے پیسے کا لالچ.

اور ایک بار صبح 7 بجے مری پہنچ گیا اس کے بعد 11 بجے تک کسی ہوٹل والے نے کمرہ نہی دیا کہتے 12 بجے نیا ٹائم سٹارٹ ہو گا پھر کمرہ ملے گا وہ 4 گھنٹے بھی آج تک یاد ہیں

بھائی مری والوں کے مطعلق سوچ میری بھی کچھ ایسی ہےجب تک آپ کمرہ کنفرم نہ کرواؤ واش روم بھی استعمال کرنے نہیں دیتے ۔منرل واٹر کی بوتل میں چشموں کا پانی بھر کر پیسے وصول کر لیتے ہیں

چلیں کم سے کم بھوک، غربت، روپیہ ،پیسہ ، سے ہٹ کر ہمیں اپنی اخلاقیات ،اپنی ذہنیت اور اپنی انسانیت وغیرہ پر بات کرنے کا موقع توملا ہمیں اندازہ ہوگیا ہے کہ ہم اپنی جانچ پڑتال بھی کرنا جانتے ہیں اللہ پاک ہمیں سیکھنے اور پھر عمل کرنے توفیق عطا فرمائے

 

 

 

برف میں پھنسی ہوئ گاڑیوں کے مسافر ایک منٹ اور چوبیس سیکنڈ میں
بے بس ہو جاتے ہیں اور آکسیجین کی جگہ کاربن ڈائ آکسائیڈ اس گاڑی کو
“ ڈیتھ چیمبر “ میں تبدیل کر دیتی ہے ۔

ہوٹل کے کرائے اتنے زیادہ تھے کہ اپنی بیوی کے زیورات دے کر ایک رات کے لیے کمرہ لیا۔ مری سانحہ میں بیچ جانے والے ایک خاندان کی روداد. ریاست مدینہ

مری کے ہوٹل اور گاڑیوں والے ہر سال اسی طرح بیغیرتی اور حرام پن کرتے ہیں۰ جو آواز اُٹھاتا ہے اس کو بدمعاشوں کی طرح سارے مل کر مارتے ہیں،

مری میں ہونے والی اموات کی تمام تر ذمہ داری حکومت پر عائد ہوتی ہے۔ حکومتی اداروں کی غفلت، عدم فعالیت اور نااہلی کے باعث لوگ قیمتی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ اسلام آباد سے چند کلومیٹر دور چھوٹا سا مری نہیں سنبھال سکتے تو ملک کیسے چلا سکتے ہیں؟

کراچی کمپنی اسلام آباد کی ایک پوری فیملی (6 ممبران) رات بھر برفانی طوفان میں سسک سسک کر اپنی جان گنوا گئی۔ لیکن اسوقت کوئی انکی مدد کو نہ پہنچا۔ اس سے بھی بڑی ستم ظریفی یہ ہے کہ کہیں تعداد زیادہ بتانے پر حکومت کی نااہلی سامنے نہ آجائے۔اس پوری فیملی کی ناگہانی موت کو چھپا دیا گیا۔

مسئلہ صرف مری کا نہیں۔ مرے ہوئے ضمیر کاہے۔اوریہ مسئلہ علاقے،قوم،زات،زبان سےبالاترہماراقومی مسئلہ ہے۔ایک بارپھرکہونگا قومی لیول پر “زہن سازی” کی ضرورت ہے۔خالق کہتاہےتیرارزق میں نےلکھ دیاہے۔اب حلال طریقےسےکماویاحرام طریقےسے، یہ تم پہ چھوڑاہے۔

Categories
Social

Zeba Gul Viral Video Leaked Full Available

Zeba Gul or Ziba gul is in the limelight once again. Zeba Gul viral video leaked full available on Whatsapp and other social media places as she stirs up the controversy again. This Afghan girl is a treat to watch as she is bubbly and quite funny.

https://youtu.be/MXnAOBnKVtk

Categories
Social

Cardano Ecosystem in Paksitan : How To Earn Free Ada Urdu

کارڈانو پہلا بلاکچین پلیٹ فارم ہے جو ہم مرتبہ جائزہ لینے والی تحقیق کے ذریعے بنایا گیا ہے ، اربوں کے ڈیٹا کی حفاظت کے لیے کافی حد تک محفوظ ، عالمی نظاموں کو ایڈجسٹ کرنے کے لیے کافی توسیع پذیر ، اور بنیادی تبدیلی کی حمایت کے لیے کافی مضبوط

انجینئرز کی ایک سرکردہ ٹیم کے ساتھ ، کارڈانو وجود کو ناقابل حساب ڈھانچے سے حاشیے پر – افراد کو دوبارہ تقسیم کرنے کے لیے موجود ہے اور مثبت تبدیلی اور ترقی کے لیے ایک فعال قوت ہے۔

اوربوروس پہلا ہم مرتبہ جائزہ لینے والا ، تصدیق شدہ بلاکچین پروٹوکول ہے ، اور کارڈانو اس کو نافذ کرنے والا پہلا بلاکچین ہے۔ اوربوروس کارڈانو نیٹ ورک کی وکندریقرن کو قابل بناتا ہے ، اور اسے بغیر کسی اہم سمجھوتہ کے سیکورٹی کے عالمی تقاضوں کے مطابق پائیدار پیمانے کی اجازت دیتا ہے۔

پروٹوکول انتھک کوششوں کی انتہا ہے ، بنیادی تحقیق کی بنیاد پر ، اور زیادہ محفوظ اور شفاف عالمی ادائیگی کے نظام کے لیے ایک وژن ، اور دوبارہ تقسیم ، زیادہ منصفانہ ، طاقت اور کنٹرول کا ذریعہ ہے۔

ایک وکندریقرت ٹیم تین آزاد اداروں میں کام کرتی ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ کارڈانو اپنے مقصد کے مطابق رہے جیسا کہ ہم آگے بڑھتے اور ترقی کرتے ہیں۔

کارڈانو سڑک کا ایک کانٹا ہے۔ یہ ہمیں اس جگہ سے لے جاتا ہے جہاں ہم تھے جہاں ہم جانا چاہتے ہیں: ایک عالمی معاشرہ جو محفوظ ، شفاف اور منصفانہ ہے ، اور جو بہت سے لوگوں کے ساتھ ساتھ چند لوگوں کی بھی خدمت کرتا ہے۔ پہلے آنے والے تکنیکی انقلابات کی طرح ، یہ ایک نیا سانچہ پیش کرتا ہے کہ ہم کس طرح کام کرتے ہیں ، بات چیت کرتے ہیں اور تخلیق کرتے ہیں ، بطور فرد ، کاروبار اور معاشرے۔

کارڈانو نے بغیر کسی ثالث کے دنیا کے نقطہ نظر کے ساتھ آغاز کیا ، جس میں طاقت کو جوابدہ چند لوگوں کے ذریعے کنٹرول نہیں کیا جاتا ، بلکہ بہت سے بااختیار افراد کو کنٹرول کیا جاتا ہے۔ اس دنیا میں ، افراد کا اپنے ڈیٹا پر کنٹرول ہے کہ وہ کس طرح بات چیت کرتے ہیں اور لین دین کرتے ہیں۔ کاروباری اداروں کو اجارہ داری اور بیوروکریٹک پاور ڈھانچے سے آزاد ہونے کا موقع ملتا ہے۔ معاشرے حقیقی جمہوریت کی پیروی کرنے کے قابل ہیں: خود مختار ، منصفانہ اور جوابدہ۔ یہ ایک ایسی دنیا ہے جسے کارڈانو نے ممکن بنایا ہے۔

Categories
Social

کـــمّــــــــــی کـــــمّیـــــــن

کـــمّــــــــــی کـــــمّیـــــــن
لیکن یہ صرف حقارت آمیز دو لفظ نہیں ہیں ان دو لفظوں میں پنجاب کی تاریخ اور تہذیب کا برباد ہونا چُھپا ہوا ہے چلیں آپ کو بتاتے ہیں جب کمّی “کمین” نہیں بنا تھا تو کیسا تھا اور جب کمّی “کمین” بن گیا تو کیا ہوا؟
یہ دو الفاظ ہیں لیکن دونوں ایک دوسرے

سے ایسے چِمٹے ہوئے ہیں کہ آپ چاہ کر بھی انہیں الگ نہیں کرسکتے لیکن حیران کُن بات یہ ہے کہ یہ دونوں لفظ دو الگ الگ قوموں کے لفظ ہیں لیکن کمال مہارت سے ان دو قوموں کے دو الگ زبانوں کے الفاظ کو ایک دوسرے سے جوڑ دیا گیا اور پھر یہ کبھی الگ نا ہوسکے

یہ دونوں الفاظ دو زبانوں کے الگ الگ لفظ “کم” سے نکلے ہیں
لیکن رُکیے
یہ دونوں “کم” دو الگ الگ زبانوں اور قوموں کے لفظ تھے
کمّی والے “کَم” کا مطلب “کام” یا انگریزی والا ورک ہے
کمین والے “کم” کا مطلب “چھوٹا”/”تھوڑا” یا انگریزی والا لیس یا لیسر ہے

کمّی کا مطلب کام کرنے والا یا ورکنگ کلاس کا فرد
کمین کا مطلب کمینہ یا چھوٹا انسان ہے
لیکن دلچسپ بات یہ ہے کہ لفظ “کمّین” پنجابی کا لفظ ہی نہیں ہے یہ ہندی/فارسی کے لفظ “کم” سے نکلا ہے جس کا متضاد “زیادہ” ہوتا ہے, اس غیر پنجابی ـفظ کم سے کئی اور الفاظ بھی نکلے ہیں

جیسے “کمینہ”, “کمتر”
جبکہ پنجابی میں کسی چیز کی کمی کے لیے لفط “کم” استعمال ہی نہیں ہوتا جبکہ اس کی جگہ “گھٹ” لفظ استعمال ہوتا ہے اسی “گَھٹ” سے پنجابی لفظ “گھٹیا” نکلا ہے جو بعد میں اُردو نے بھی اپنا لیا

اسی طرح قدیم پنجابی لفظ “کَم” سے لفظ “کمائی” نکلا اور “کماؤ” نکلا جیسے میری “کمائی” میرا “کماؤ پُوت” خیر “کمّی” تو پنجابی میں ہی رہا جبکہ کمائی اور کماؤ پُوت ایسے الفاظ تھے جو ہندی اور اُردو دونوں میں گئے,
کہنے کا مطلب پنجاب کا “کمّی” وہ طبقہ تھا جسے

ورکنگ کلاس کہتے تھے یعنی وہ “کاما” طبقہ جو “کماؤ” تھا اور سیپی یعنی اجرت سے “کمائی” کرتا تھا یعنی کام سے کماتا تھا سمجھ آئی؟

“کــــــــــــــــــــــــمّــــــــــــــــــــــی” لفظ اپنے آپ میں ایک ٹائٹل ہے یہ ہر اُس انسان کا ٹائٹل ہے جو “کم” یعنی کام کرتا ہے, اس لحاظ سے آپ کا وزیراعظم بھی “کمّی” ہے آپ کا جج بھی “کمّی” ہے کھیت میں ہل جوتنے والا, جہاز اُڑانے والا, ہوٹل چلانے والا, ورکشاپ, کلینک, سکول,

دوکان چلانے والا بھی “کمّی” ہے مطلب اس لفظ کا دائرہ اتنا وسیع ہے کہ جتنا وسیع “کم” یا پھر “کمائی” کا دائرہ ہے جب آپ اس لفظ کی سرزمین پنجاب اور اس کی زبان پنجابی تک محدود رہ کر اس لفظ کا نتارا کریں گے تو آپ کو یہ لفظ “خوبصورت” لگنے لگے گا
لیکن یہ “کمّی” آخر “کمین” کب بنا؟

تو جواب ہے صرف کُچھ صدیاں پہلے کمّی کے ساتھ کمین جوڑا گیا چونکہ لفظ کمین پنجابی کا لفظ ہی نہیں ہے اور آج تک بھی پنجابی میں لفظ “کم” تھوڑے کے معنوں میں فِٹ ہی نہیں ہوتا جیسے
یہ جُملہ
“آ سالن کم اے ودھ پا”
یا
“میرا صاب مینوں کم تنخواہ دیندا اے”

آپ خود غور کریں ان دو جُملوں میں لفظ “کم” فٹ ہی نہیں ہو رہا اُس کی وجہ ہی یہ ہے کہ یہ پنجابی کا سرے سے لفظ ہی نہیں اب دوبارہ جُملہ پڑھیں
“آ سالن گھٹ اے ودھ پا”
یا.
“میرا صاب مینوں گھٹ تنخواہ دیندا اے”

کیونکہ پنجابی میں بالکل اسی آواز کے لفظ “کم” کا مطلب کام تھا اور یہ پنجابی میں مستعمل تھا اس لیے فارسی/ہندی کا لفظ “کم”( یعنی تھوڑا) پنجابی میں جگہ نا بنا پایا
جیسے پنجابی کے لفظ “کم” یعنی کام کی جگہ عربی لفظ “شُغل” جگہ نا بنا پایا جبکہ عربی لفظ شُغل کا مطلب

“کام” ہے لیکن چونکہ پنجابی میں اسی آواز کا ایک اور مقامی لفظ “شُغل” بہت قدیم دور سے رائج تھا جس کا مطلب مزاح ہے اس لیے عربی شُغل یعنی کام پنجابی لفظ شُغل یعنی مزاح/مستی کی موجودگی کی وجہ سے پنجابی میں جگہ نا بنا پایا جبکہ پنجابی میں ڈھیروں دوسرے عربی لفظ اور فارسی لفظ اپنی جگہ

بنانے میں کامیاب ہوئے
اسی طرح چونکہ کاف اور میم سے بنا یہ لفظ کم یعنی کام پنجابی میں پہلے سے تھا اس لیے صرف فارسی/ھندی لفظ “کم” جسکا مطلب تھوڑا ہوتا ہے ہی نہیں بلکہ اسی آواز کا عربی لفظ “کم” جسکا عربی میں مطلب “کتنا” ہوتا ہے بھی پنجابی میں جگہ نا بنا پایا
یعنی کسی دوسری زبان کا

لفظ بھی اُسی وقت آپ کی زبان میں امپورٹ ہوتا ہے جب اسکے معنی کا تو ایک طرف اسکی آواز کا بھی لفظ آپ کی زبان میں نا ہو,
پھر یہ کمّی کے ساتھ کمین کہاں سے آیا جب یہ کمّین لفظ پنجابی کا ہے ہی نہیں؟
تو جان لیں یہ لفظ کمّین بھی فارسی و عربی کی طرح باہر سے آیا اور پنجاب میں بھی

کمّیوں یعنی ورکنگ کلاس کو “کمین” یعنی کمینہ کا ٹائٹل بھی باہر سے آنے والوں نے دیا,
کیونکہ اُنکی تہذیبوں میں پیشے تھے ہی نہیں جبکہ پنجابی تہذیب کا حسن ہی یہ پیشے تھے ان باہر سے آنے والے غیر متمدن لوگوں نے ان پیشوں سے منسلک لوگوں کے “کمّی” جیسے مقامی با عزت ٹائٹل کے ساتھ

“کمین” جیسا حقارت آمیز لفظ جوڑ دیا کیونکہ انہیں انکو دیکھ کر خود سے گِھن آتی تھی عربوں, افغانوں, فارسیوں, تُرکوں کے پاس جولاہے, موچی, تیلی, کمہار, ترکھان, نائی تو تھے نہیں انکی تہذیبیں ان پیشوں سے لا علم تھیں اس لیے انہوں نے ان غیر عسکری پیشوں کو “کمین” کا ٹائٹل دیا جبکہ مقامیوں

کا تو معاشرہ ہی انکے بغیر نا چلتا تھا اس لیے مقامی انکو اُس حقارت کا نشانہ نا بناتے تھے جس حقارت کا نشانہ انہیں غلامی کے سات سو سال تک بنایا گیا اور ظاہر ہے پھر ان کے ٹائٹل “کمّی” کے ساتھ “کمین” جُڑ گیا اور مقامی برادریوں نے بھی انہیں کمّی کمین کہنا شروع کردیا اور ظاہر ہے

سات سو سال میں ان باہر کے مسلمانوں کا اثر تو ان مقامی کنورٹڈ مسلمانوں پر بھی پڑا ہی تھا انکی کچھ عادتیں توں باہر سے آنے والوں جیسی ہو ہی گئی تھیں

 

Categories
Social

Zahir Jaffar Full Profile Story and Video with Noor

Police investigation reveals Zaahir Jaffer, killer of of Noor, is a US citizen and was booked to leave Islamabad for America on a flight today. Police is treating this as proof of premeditated murder and attempted flight from justice. Make the criminal Zahir Jaffer’s face viral not of the victim. Let his family not get away with this murder.

We should not even be responding to the narrative that he was mentally ill. This is what always happens, we start putting out small fires instead of looking at the actual issue. This guy would not heading a company if he was considered unstable enough to actually behead someone. How have we reached a point where “infidelity” by women is considered a sin and a stain on a whole family but a murderer is just a guy who had some mental health issues. How can we look at our cultures and say this is okay?

I have received reliable information that the murderer’s family is trying to bribe police and a judge to allow him to flee. They have also threatened the family of the deceased. A judge is not involved at this stage of the investigation so the presumption that any one would bribe is judge is far fetched sir with all due respect and grief for your loss. The judge will set involved after the police files a final challan and stage of indictment arrives. While Islamabad reels from this, want to take a moment to remind everyone that this is a case of gender based violence.

Shocking information for sources Noors headless n@ked body was found at this monsters place the head was placed away from the assaulted body by this animal It is reported that earlier he was deported from the UK on rape charges too. You’re going to see a lot of degenerate cockroaches posting vile and hateful stuff about #JusticeForNoor and will be tempted to reply to them. Try to avoid it as this subhuman filth wants exactly that…to distract and make it about them. Dont let them. Focus. So the guy Zahir also stabbed one of the guys who came to rescue the girl and that guy is in critical condition now in the hospital.

Police report in Justice For Noor case says case registered against Zahir Jaffer under Section 302 (premeditated murder) of Pakistan Penal Code on the complaint of the victim’s father late on Tuesday. In his complaint, Shaukat Mukadam says he went to Rawalpindi on July 19 to buy a goat for Eid Al Adha while his wife had gone to her tailor. When he returned home in the evening, the couple found their daughter Noor absent from their house in Islamabad. Noor’s parents found her cellphone number to be switched off, and started a search for her. Sometime later, Noor called her parents to inform them that she was travelling to Lahore with some friends and would return in a day or two, according to police report.

On Tuesday afternoon, the complainant Noor’s father said he received a call from Zahir Zamir Jaffer, son of Zakir Jaffer, whose family were the ex-diplomat’s acquaintances. Zahir informed Mukadam that Noor was not with him, the police report said. At around 10pm on Tuesday, Noor’s father received a call from Kohsar police station in Islamabad, informing him that Noor had been murdered. Police subsequently took Noor’s father to Zahir Jaffer’s house in Sector F-7/4 where he discovered that his “daughter has been brutally murdered with a sharp-edged weapon and beheaded”, according to the police report.

If we are to make society safer for women, children & under-age home workers, we must ensure expedited trials, exemplary punishments & prohibit settlement by legal heirs (due to financial or other reasons) as these aren’t just offences against persons but society. Those who rejected Women Protection Bill, including Imran Khan,are the culprits. When a misogynist PM says that rapes by non robotic men are a result of dresses women wear, these incidents are bound to increase. Yes I voted for PTI and I supported Imran through and through but I am really hurt by his dealings of this issue and cannot support him in this. We have to call a spade a spade.

Exit mobile version